رٹکل ۱۵ – مساوات کے لفافے غيربرابری کے مخالف مضمون کے ساتھ پيش کی گیٔآ

0
Want create site? With Free visual composer you can do it easy.

آرٹکل ۱۵ – مساوات کے لفافے غيربرابری کے مخالف مضمون کے ساتھ پيش کی گیٔی فلم۔

 

آرٹکل ۱۵ – گاندهیواد اور متحد دلت بہوجن مخالفت کا انکار اور قومی استحسال کا مجازي کاروباری استعمال۔

 

آرٹکل ۱۵ بدنيتي سے بنی يا لکهی گیٔی فلم نہ بهی ہو تو بهی ايک باہری شخص کی ايسی فلم ہے جسے نہ اپنے ٹارگيٹ کی سمجھ ہے نہ اور نہ اسکے پاس وہ صلاحيت ہے کے تخيلات کے عروج پر جا کر ان احساسات اور تکليفوں کو نثر کر سکے جس سے ايک خاص عوام اصل ميں گزر رہی ہے۔ يہ صرف ايک کاروباری لحاظ سے بنی فلم ہے جس ميں حال ہی ميں ہوۓ تمام حادثات جيسے زنابالجبر اور بہوجنوں پر ظالم جيسی چيزوں کا کولاج سا بنا کر خاص جگہ ميں کویٔی کرامت کرنے کی کوشش کی گیٔی ہے۔ آیٔے اسے فلم کے ذريعه اسے سمجھتے ہيں۔اسکے پہلے ليکن ايک سوال کی کاروباری مفاد کے بنی يہ فلم کس آڈينس کو آرٹکل ۱۵ يعنی مساوات کا اصول پڑھانا چاہتی ہے۔ اگر يہ فلم برهمن وادی ظالم سماجی مرکز سے آنے والے آڈينس تو فلم کی کہانی کچھ اور ہونی چاہيے۔ جيس یو آر اننتمورتی کے سنسکار یا پهر انکی ہی کہانی پر بنی فلم دیکشا کی کہانی جيسی۔ اسکا ٹارگيٹ آڈينس ہے دلت معاشرہ جو پيسے خرچ کر سکتا ہے۔ اور جسے يہ فلم اپنا ماضي لگتی ہے يا حال جس سے وہ خود کو جوڑ کر ديکھ پاتا ہے اگر برہمن وادی سماجی لوکےشن کا آڈينس نشانا ہے تو يہ فلم یوتھ فور اکويلٹی اور گاندهی واد کی ملی جلی سياسی زہنيت کے ساتھ انہيں آرٹکل ۱۵ کا علم دے رہا ہے۔ جو اس آرٹکل کے اپبندھ ۱ اور ۲ کو ہی پروپگيٹ کر رہی ہے۔ اور اپبندھ ۳ اور ۴ جيسے اپبندھ کو۔ نہ ۷۰ سالوں ميں پڑنے والے انکے اثر کو اور نہ ہی مقصد کو۔ بلکہ ان دو اپبندھوں کو نکارنے کی اچھی خاصی کوشش کی گیٔی ہے۔ فلم کا پوسٹر جو برہمن کردار کی کوشش سے لگتا ہے۔

 

سیکشن 15 کا کہنا ہے کہ:

15 [1] ریاست اپنے شہریوں کے درمیان مذہب، ذات، جنسی، پیدائش کی جگہ، مذہب کی بنیاد پر تبعیض نہیں کرے گا

15 [2] شہریوں کو عوامی مقامات تک پہنچنے کا حق ہوگا اور اس کے استعمال میں [ریسٹورانٹ، سنیما، کنویں، مندر وغیرہ] انہیں مولونش، ذات، مذہب، جنس، پیدائش کی جگہ کی بنیاد پر نہیں روکا جايےگا جهاں پہلی آرٹیکل صرف ریاست پر لاگو کیا گیا تھا عام شہریوں پر بھی لاگو ہوتا ہے، یہ آرٹیکل چھو اچھوت کے خلاف ایک مؤثر طریقہ ہے.

15 [3] اس آرٹیکل میں ودھمان کوئی اپبندھ ریاست کو خواتین اور بچوں کے لئے خصوصی اقدامات کئے جانے سے نہیں روک سکتے،

15 [4] پہلا سنشودھن پر مؤثر ہے – آرٹیکل 15 میں ودھمان کوئی اپبندھ ریاست کو سماجی تعلیمی اعتبار سے پچھڑے طبقوں کیلئے خصوصی اقدامات کرنے سے نہیں روکے گا

 

فلم کا منظر اشارہ

 

فلم میں شیڈول کاسٹ قبیلے -ہراسمینٹ اور عصمت دری کی حالیہ گھٹناؤں- نربھیا دہلی، دو دلت لڑکیاں بدایوں، آصفہ، جموں اور جیپ سے بندھے شیڈول کاسٹ کے لڑکے اونا اور اترپردیش کے انکاؤنٹر کا ایک کولاج بنایا گیا ہے اور جد و جہد کرتا ایک دلت نوجوانوں کا سموه ہے جو سہارنپور میں بھیم آرمی کی نقل ہے. ان مناظر کو رچنے میں کلپناشیلتا بس اتنی ہے کہ سب کو ایک ہی جگہ پر واقع ہو دکھا دیا گیا ہے اور ان میں جو منظم دلت مزاحمت ہوئے تھے انہیں کسی گوریلا کارروائی میں تبدیل کر دیا گیا ہے. گوریلا کارروائی میں ان اقدامات کو تبدیل کرنے کے فلم کے ایجنڈا کو بتلاتا ہے.

 

اس کے برعکس فلم کا برہمن ہیرو لاء اباڈگ سٹیزن ہی نہیں لا انفارسنگ ایجنسی کا مقامی سربراہ بھی ہے جس کے عقیدے آئین میں ہے. ذات کے سوال پر تقریبا دوسرے یا تیسرے شاٹ میں ہی وہ ان کے دفتر میں لگے بابا صاحب اور گاندھی کی تصاویر میں سے ایک تصویر کو غور سے، محبت اور احترام سے دیکھتا ہے .وہ تصویر ہے گاندھی کی. یعنی آئین کے آرٹیکل 15 کے مصنف ڈاکٹر امبیڈکر کے تئیں ہیرو کی کوئی آستھا نہیں ہے، وہ گاندھی کے لئے آستھاوان ہے. فلم کا توسیع بھی اسی سمت میں ہوتا ہے آرگینک قیادت اور مزاحمت کی بے ایمانياں، انحراف یا پھر نوعمری کو برہمن ہیرو کے صبر، سوجھ بوجھ، برابری کے تئیں آستھا، ایمانداری اور پختگی کے برعکس دکھایا جاتا ہے.

 

تباہ شدہ، بے نظیر بھجن جدوجہد اور سماج:

 

آرٹیکل 15 کے اپبندھ 4 نے اور بڑی حد تک 3 نے دلت مڈل کلاس کو گزشتہ 70 سالوں میں بڑھا دیا ہے. انتظامیہ، تعلیم اور نظام عدل اور سیاست میں بھی ان کی شرکت برتری کے لئے آج کی حقیقت ہے- دےنیہ گھٹا ہے، شعور میں اضافہ ہوا ہے. لہذا جدوجہد بھی تیز اور مؤثر ہے. کسی بھی حالیہ واقعے میں، کوئی برہمن ہیرو نے جدوجہد نہیں کی ہے. وہاں امبیڈکر وادی شعور مؤثر اور گاندھی واد نہیں ہے.

 

اس کے برعکس، دلتوں کے دےنیہ کو ہی فلم میں مزید ابھارا ہوا ہے. ہر ممکن کوشش کی گئی ہے کہ براهمواد کے اصل تنقید کی جگہ دلتوں کے اندر اندر ذات ساخت کے تضاد کو اجاگر کیا جائے. بہوجن سیاست گمراہی اور خود مختاری دکھائی دے رہی ہے. مہنت کے ساتھ بہوجن کے نیتا کا اتحاد بی ایس پی کی سیاست کی آلوچنا ہے. بھيم آرمي کے چندر شیکھر کو بھگت سنگھ اور چندر شیکھر آزاد کی کھچڑی بنایا گیا ہے جس کی شکست اس جوش میں ہی مضمر ہے. کاش! فلم کی ٹیم نے چندر شیکھر اور بھیم آرمی کی سہارنپور میں اثر کو ہی دیکھ لیا ہوتا تو لگتا کہ کس طرح جدوجہد اور شعور کی چمک شیڈول کاسٹ کو وہاں مانج رہی ہے اور براهمواديو میں بے چینی پیدا کر رہی ہے.

 

بہوجن سیاست، شعور اور جدوجہد کے اس آرگینك جوش و جذبے کو دھولدھوسرت کر برہمن ہیرو اور اس کی معشوق کو ایک ایسے واسكوڈگاما کی طرح پیش کیا گیا ہے جیسے اس نے پہلی بار ارٹكل 15 کی عظیم جدوجہد کی ہو ان دونوں ہی جوڑے کی ذات اعلی ذات ہے. برہمن ہیرو عظیم سمتاپري ہے لیکن گٹر کی صفائی کے لئے وہ ایس سی کو ڈھونڈنے میں مکمل محکمہ لگا دیتا ہے اور تو اور تھانے کے قریب صفائی کے لئے ناراض بہوجن کے رہنما سے جا کر ٹكٹیكل معاہدہ بھی کرتا ہے.

 

اس پوری فلم میں، بدترین برہمن وادی چیتنا کام کر رہی ہے، جو کاروباری طور پر کاروبار کرنے کے لۓ لبرل بن جاتا ہے. دانشوروں کا ایک گروہ ان کے ساتھ ہے، جو بیگوسرائے سے لیکر آرٹیکل 15 تک میں اس کے ہیرو کا چئیر لیڈر ہے. اسے اپنے ہیرو کی تلاش ہے جو بات تو مساوات کی کرے لیکن مرتبہ برہمنوں کا، اعلی ذات کا نصب کرے-یوتھ فار اكوالٹي کا دانشورانہ حمایتی گروپ، جو سياسی نقاد ہونے کو بھی سادھتا رہتا ہے.

ايسی فلميں بننی چاہيے ليکن مساوات کے لفافے ميں بالکل الگ مضمون کے ساتھ انکا استقبال کیوں ہو بهلا۔

 

~سنجيو چند’

ايڈيٹر اسٹریکال اور سماجی سياسی محقق ۔

Did you find apk for android? You can find new Free Android Games and apps.

शयद आपको भी ये अच्छा लगे लेखक की ओर से अधिक