ब्राउजिंग श्रेणी

Urdu

منيشا بانگر’ ايک تعرف

دوسرا سوال - آپ پيشے سے ڈاکٹر ہيں اور ساتھ ہی ايک سياسی رہنما بهی۔ کاليج کے دن اور موجودا مصروفيات کے بارے ميں بتائں۔ جواب - ابتدائي تعليم کے بعد ايم بی بی ايس کيا اور ايم ڈی بهی کيا۔ اسکے بعد پی جی آئی چنڈیگڑھ سے ڈی ايم (ڈاکٹريٹ ان ميڈِسن) کيا۔ يہ سارا وقت يوں تو پڑھائی ميں گزرہ ليکن يہی وه وقت بهی تها جب میں سماجی معاملات کو زمينی شکل ميں ديکھنے سمجهنے لگی تهی۔ وہ تمام مشکلات جنکا سامنا مجھے نہيں کرنا پڑا تها انکا سامنا کرتے ہوۓ نوجوانوں کو ديکهتی تهی۔ چهوآ چھوت عروج پر تھی۔ مزہب اور قوم کے نام پر لوگوں…

منيشا بانگر’ ايک تعرف

۱۹۴۲ ميں ہونے والی کانفرينس پسماندہ اور بہوجن معاشره کے حق ميں ہونے والی بڑی پہل تهی۔ اور اس کانفرينس ميں عورتوں کے حقوق کےمتعلق بهی کئی مدعوں پر بات ہوئی۔ اس وقت کانگريس اور مہاتمہ گاندهی ايک طرف تهے اور مختلف خيالات رکهتے تهے۔ يعنی عورتوں کے پڑهنے لکھنے کی تو وکالت کرتے تهے ليکن اسے کام مردو کی قيادت ميں ہی کرنا ہوگا۔ اور مہاتمہ گاندھی نے خود بهی عورتوں کا استحصال ہی کيا ہے 'حق کی تلاش' کے نام پر۔ دانڈی مارچ کے دؤران بهی عورتوں کا کام گاندھی کے پيچھے پيچهے چلنا اور انکی مدح و ثنا کرنا ہی ہوتا تها۔ اور ايک…

تبريز انصاری’ بهیڑ کا شکار

ہندوستان ميں بهيڑ کتنی بے قابو ہو چکی ہےاسکی مثاليں آۓ دن ديکهنے کو مل جاتی ہيں۔ کبهی کسی کومزہب کے نام پر سرعام مار ديا جاتاہےتوکسی کو قوم کے نام پر۔ کسی کو منحوس یا ڈائن بتا کرمار ديا جاتا ہےتو کسی کو چورکہہ کر مار ديا جاتا ہے۔ بهيڑ کا ايک اورشکار ہے جهارکهنڈ کا تبريز انصاری جسے چوری کے الزام ميں سات گهنٹے تک کهمبے سےباندھ کر اتنا پیٹا گیا کہ اسکی موت ہو گئی۔ اور نہ صرف اسے پیٹا گیا بلکہ جب لوگوں کو پتا چلا کہ وہ مسلمان ہے تو اس سے جبرًا جے شری رام کے نارے لگواے گيے۔ يقيناً ائسا کرنے سے رام خوش ہوۓ ہونگے۔…

منيشا بانگر’ ايک تعارف۔

منيشا بانگر آج کے وقت ميں ايک جانا مانا نام ہے۔ جو جانا جاتا ہے اپنی تمام سماجی خدمات کے ليے۔ اور جس طرح سے اپنی زندگی کو وقف کر ديا اس معاشرہ کے ليے جس کی آواز اٹھانے والا کویٔی نہيں تھا۔ منيشا بانگر سرف ايک نام بهر نہيں ره گیا ہے بلکہ آواز بن گیا ہے' آواز ان دبے کچلے لوگوں کی جو آزادی کے بعد بھی آزاد نہيں ہو سکے ہيں۔ جنکے پاؤں ميں مزہب کی بيڑياں تو گلے ميں جاتی کا طوق پڑا ہؤا ہے۔ جنکی بنيادی ضرورتوں يعنی صحت' روزگار اور علاج پر بهی بات کرنے والا کوئی نہيں ہے۔ اور جو انکے ليے آواز اٹهاتا ہے اسکی آواز دبانے کی ہر…

نوجوت سنگھ سِدّهو کا مودی کے خلاف بڑا بيان۔

نوجوت سنگھ کا مودی کے خلاف ايک بڑا بيان ہم مضمون ميں تحرير کر رہے ہيں۔ جس ميں وه ثبوتوں اور دليلوں کے ساتھ مودی سرکار کی پول کھول رہے ہيں۔اور ايسے سخت سوال اٹھا رہے ہيں جنکا جواب مودی يا انکی پارٹی سے جڑے کسی شخص کے پاس نہيں۔ نوجوت سنگھ مودی کے تمام غير ملکی دؤروں کی پول کھولتے ہؤے کہتے ہيں کہ مودی صاحب نے اب تک ۵۵ ممالک کے دورے کيے۔ اور اسکے بدلے ملک کے ہاتھ کچھ نہيں آيا اور آی تو صرف دھاندلے بازی۔ وه سلسلےوار ان تمام دوروں کا تذکرہ کرتےہوے کہتے ہيں کہ ان ۵۵ دوروں ميں امبانی کو ساتھ لے کر ۱۸ بڑے معاہده کيے گيے۔ وه معاہدے جو…

پیپلس پارٹی آف انڈيا کی ناگپور سے لؤکسبھا اميدوار ڈاکٹر منيشا بانگر

: پیپلس پارٹی آف انڈيا کی ناگپور سے لؤکسبھا اميدوار ڈاکٹر منيشا بانگر نے راز کھولا کہ چناؤ کے دوران ان پر کيی علاقوں سے دباؤ ڈالا گیا کہ وہ چناؤ ميدان سے باہر ہو جايں۔ ايک خاص گفتگو ميں ڈاکٹر منيشا بانگر نے کہا کہ انہوں نے ان تمام دباؤ کی فکر کيے بغير چناؤ کی تياری جاری رکھی اور بھاجپا کے اميدوار نتن گڈکری اور کانگريس کے نانا پٹولے کو مضبوط ٹکر دينے کے اپنے فيصلہ پر قائم رہيں۔ منيشا بانگر نے کہا کہ کہ ۱۱ اپريل کو ہوے انتخابات ميں اميدواروں کا سياسی مستقبل ای وی ايم ميں قيد ہو کر ره گيا ہے۔ اور اب ۲۳ ميی کو نتيجہ آيگا۔ اسليے…